ارکانِ تصوف NafseIslam | Spreading the true teaching of Quran & Sunnah
We are updating NafseIslam, so you might experience some issues. We are sorry for the incovenience caused.

This Article Was Read By Users ( 3390 ) Times

Go To Previous Page Go To Main Articles Page



ارکانِ تصوف
مشائخ کرام کے نزدیک تصوف کے چار ارکان ہیں:
(۱) شریعت
(۲) طریقت
(۳) حقیقت
(۴) معرفت
-٭--٭--٭--٭--٭--٭--٭--٭--٭--٭--٭--٭--٭--٭--٭-
قرآن و سنت کے ظاہری احکام کو ’’شریعت‘‘ کہا جاتا ہے۔
-٭--٭--٭--٭--٭--٭--٭--٭--٭--٭--٭--٭--٭--٭--٭-
اور ’’طریقت‘‘ ان کے باطن کا نام ہے۔ مثال کے طور پر طہارتِ شرعی یہ ہے کہ بدن کو پاک کرلیا جائے لیکن ’’ طریقت‘‘کی طہارت یہ ہے کہ دل کو تمام برائیوں سے پاک کیا جائے۔
-٭--٭--٭--٭--٭--٭--٭--٭--٭--٭--٭--٭--٭--٭--٭-
’’شریعت‘‘ کے احکام پر عمل کرنے سے جو اثرات ذہن و قلب پر مکمل طور پر چھا جائیں اور یقین کی دولت حاصل ہو جائے تو اِسے ’’حقیقت‘‘ کہا جاتا ہے۔
-٭--٭--٭--٭--٭--٭--٭--٭--٭--٭--٭--٭--٭--٭--٭-
’’ معرفت ‘‘سے مراد ہے:اللہ تعالیٰ کی پہچان۔اس کا دوسرا نام ’’عرفان‘‘ ہے۔ جب صوفی پر حقائق کھلتے ہیں تو وہ حق الیقین کی منزل پر پہنچ جاتا ہے۔یہی عرفان ہے اور یہی معرفت ہے۔
-٭--٭--٭--٭--٭--٭--٭--٭--٭--٭--٭--٭--٭--٭--٭-
حضرت خواجہ نظام الدین اولیاء قدس سرہ فرماتے ہیں کہ
جب سالک سے کوئی غلَطی ہو جاتی ہے تو ’’معرفت‘‘ سے ’’حقیقت‘‘ کی منزل پر آجاتا ہے۔جب حقیقت کی منزل پر اس سے غلطی ہوتی ہے وہ ’’طریقت‘‘ کی منزل پر آجاتا ہے۔ جب طریقت کی منزل پر اس سے غلطی ہوتی ہے تو’’شریعت‘‘ کی منزل پر آجاتا ہے۔اس لئے ’’شریعت‘‘ کی پابندی ضروری ہے۔
=========
نکات واحد:
اگر یہ سوال کیا جائے : ’’صوفی‘‘ کون ہوتا ہے؟۔۔۔۔
تو اس کا مختصر جواب یہ ہے:
پاکیزہ خیال ، خیر اندیش ، نیک نیت ، اہل دل ، اہل ذوق ، فائدہ بخش اور دعا گو۔۔۔۔۔۔
---------------------
از: صاحبزادہ واحد رضوی صاحب
====================
صوفی انسانیت کا دشمن نہیں بلکہ دوست ہوتا ہے صوفی کو نفرت برے سے نہیں بلکہ برائی سے ہوتی ہے ۔ اگر صوفیا بروں سے نفرت کریں تو کون ہو گا جو بروں کو منزل کی راہنمائی کرےگا-
-----------------------
از:حضرت پیر علاؤ الدین صدیقی نقشبندی دامت برکاتھم العایہ
==================
اعلی حضرت ، امام اہل سنت الشاہ امام احمد رضا خان بریلوی رحمۃ اللہ علیہ فرماتے ہیں:
حاشا نہ شریعت و طریقت دو راہیں ہیں نہ اولیاء کبھی غیر علماء ہو سکتے ہیں، علامہ مناوی \"شرح جامع صغیر \" پھر عارف باللہ سیدی عبدالفنی نابلسی \"حدیقہ ندیہ\" میں فرماتے ہیں: امام مالک رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں:
علم باطن نہ جانے گا مگر وہ جو علم ظاہر جانتا ہے ،
امام شافعی رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں:
اللہ نے کبھی کسی جاہل کو اپنا ولی نہ بنایا یعنی بنانا چاہا تو پہلے اسے علم دے دیا اسکے بعد ولی کیا۔
----------------------
(فتاوی رضویہ شریف، ج 21 ، ص 530)
===================
اعلی حضرت فتاوی رضویہ شریف میں فرماتے ہیں:
شریعت ، طریقت ، حقیقت معرفت میں باہم اصلا کوئی اختلاف نہیں اس کا مدعی اگر بے سمجھے کہے تو نرا جاہل ہے اور سمجھ کر کہے تو گمراہ ، بد دین۔
شریعت، حضور اقدس سید عالم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے اقوال ہیں،
اور طریقت ، حضور کے افعال،
اور حقیقت، حضور کے احوال،
اور معرفت ، حضور کے علوم بے مثال.
------------------------
فتاوی رضویہ شریف ، ج 21 ص 460
=======================